Slider 01 Slider 02 Slider 03 Slider 04
This is an example of a HTML caption with a link.
 

Islamic Facebook Status Page 3


 

Bismillāhir-raḥmānir-raḥīm
————————————
Sayyidina Ibn Mas’ud (RA) reported that Allah’s Messenger (SAW) said,
“The feet of the son of Adam will not move away from his Lord on the Day of Resurrection till he is asked about five things about his life
▶ How he spent it;
▶ About his youth how he passed it;
▶ About his wealth how he earned it;
▶ And again about wealth how he spent it;
▶ And about what actions he took on that which he learnt (Divine Commandments).”
————————————
[Sunan At-Tirmidhi, Book of Resurrection, Hadith 2424]

ہمیں وہ اپنا کہتے ہیں محبت ہو تو ایسی ہو
-------------------------------------------------
ہمیں وہ اپنا کہتے ہیں محبت ہو تو ایسی ہو
ہمیں رکھتے ہیں نظروں میں عنایت ہو تو ایسی ہو
وہ پتھر مارنے والوں کو دیتے ہیں دُعا اکثر
لاؤ کوئی مثال ایسی شرافت ہو تو ایسی ہو
اشارہ جب وہ فرمائیں تو پتھر بول اُٹھتے ہیں
نبوت ہو تو ایسی ہو رسالت ہو تو ایسی ہو
وہاں مُجرم کو ملتی ہیں پناہیں بھی جزائیں بھی
مدینے میں جو لگتی ہے عدالت ہو تو ایسی ہو
بنا دیتے ہیں سائل کو سکندر وہ زمانے کا
کریمی ہو تو ایسی ہو سخاوت ہو تو ایسی ہو
مُحمدﷺ کی ولادت پر ہوئے سب کو عطا بیٹے
اسے میلاد کہتے ہیں ولادت ہو تو ایسی ہو
زمین و آسماں والے بھی آتے ہیں غُلامانہ
حقیقت ہے یہی ناصرؔ حکومت ہو تو ایسی ہو
 

 

About 'lying' the Prophet, peace be upon him, said: "Lying leads to obscenity and obscenity leads to the fire of hell."
 
[Sahih Muslim]
 

 
صـــــــــرف الله کی بندگـــــــــی
 
اور محمّــــد (ص) کی پیــــــروی
 
 

 

Give the Deen what's right, not what's left.
 

 

Persistence on a righteous action even if small
------
Aa'ishah (R) narrated that the Holy Prophet (SAW) was asked what action is most beloved to Allah (SWT). He said:
“The most constant even if small.”
 

 

ربنــــــــــــــا إننــــــــــــــا آمنـــــــــــــــــــا
فاغفـــــــــــــرلنـــــــــــــا ذنوبنــــــــــــــــــا
وقنــــــــــــــا عــــــــــــــذاب النــــــــــــــار
 

 

There is only one way to come home from a war zone With your enemy’s head or without your own And if I die in war I’ll die as a martyr Tell my little sons not to cry for their father Tell them my last words I pronouncedah shahada Tell ’em I squeezed the trigger ’til I met death with honor
 

 

If you have the right to slander the Messenger of Allah (SAW), we have the right to defend him. If it is part of your freedom of speech to defame Muhammad (SAW) it is part of our religion to fight you. We will fight for him, we will instigate, we will bomb and we will assassinate, and may our mothers be bereaved of us if we do not rise in his defense. ~Shaykh Anwar Al-`Awlaki
 

 

Abu Huraira (RA) reported: The Apostle of Allah (SAW) said:
"When any one of you awakes up from sleep and performs ablution, he must clean his nose three times, for the devil spends the night in the interior of his nose."
(Sahih Muslim, Book 002, Number 0462) -
-------
Explanation: Islam puts great emphasis on the purity and cleanliness of the body, and also on clothes, home, the environment and in all aspects of living. After a microscopic investigation on those who regularly perform ablution and those who do not, it was confirmed that the noses and surrounding areas of those who perform ablution regularly remained comparatively clean from microbes. Whereas, those who do not perform ablution the nose and surrounding area was seen harboring relatively richer types of harmful organisms such as cluster, organic & rosary microbes which spread quickly and can enter into the digestive system and the blood circulation and cause many kinds of diseases (i.e. self poisoning). Therefore, Islam, asked Muslims to 'inhale' water into the nose three times during each ablution. And Allah knows best
-------- 
 

 

Martyrdom of Afzal Guru is Judicial terrorism that Kashmir will never forget.
 

 

Abraham vs Nimrod
--------
He [Abraham] was given over to Nimrod. [Nimrod] told him: Worship the Fire! Abraham said to him: Shall I then worship the water, which puts off the fire! Nimrod told him: Worship the water! [Abraham] said to him: If so, shall I worship the cloud, which carries the water? [Nimrod] told him: Worship the cloud! [Abraham] said to him: If so, shall I worship the wind, which scatters the clouds? [Nimrod] said to him: Worship the wind! [Abraham] said to him: And shall we worship the human, who withstands the wind? Said [Nimrod] to him: You pile words upon words, I bow to none but the fire - in it shall I throw you, and let the God to whom you bow come and save you from it! Haran [Abraham's brother] was standing there. He said [to himself]: what shall I do? If Abraham wins, I shall say: "I am of Abraham's [followers]", if Nimrod wins I shall say "I am of Nimrod's [followers]". When Abraham went into the furnace and survived, Haran was asked: "Whose [follower] are you?" and he answered: "I am Abraham's!". [Then] they took him and threw him into the furnace, and his belly opened and he died and predeceased Terach, his father. [Genesis 11:28]
 

 

 

وقــــــل جـــاء الحـــــــق وزهـــق الباطــــــل

 

إن الباطـــــــــــــل كـــــــــــــان زهــــــــــــوقا

 

 

 


 

We have the Aztecs who were big on sacrifice. It was an integral part of their Religion. As they saw it, they would take their subject, make him lay perfectly still while the High Priest took a stone knife and cut his flesh (while he was still alive), tear out his heart (still beating) and burn it, offering the smoke as sacrifice and the body thrown down the Synagogue's stairs. In the Aztec view, humanity's "divine fragments" were considered "entrapped" by the body and its desires: Where is your heart? You give your heart to each thing in turn. Carrying, you do not carry it... You destroy your heart on earth
 

 
ولا تهنوا ولا تحزنوا
 
So do not lose heart or be grieved
 
وأنتم الأعلون
 
for you will surely prevail
 
إن كنتم مؤمنين
 
if you are believers
 
----- [3:139]
 

 
صحابہ کرام کا جذبہ عشق نبی اور شوق شہادت
__________________________________________
 
ہر نبی اور رسول علیہم الصلوٰۃ والسلام کے جاں نثار اور حواری ہر دور میں ہوئے، اور ہر دور کے حواریوں نے اپنی محبت ووفاداری کا ثبوت دیتے ہوئے اپنے نبی کی اطاعت ومدد میں ہر ممکن کوشش کی۔ لیکن سید الانبیاء والمرسلین، افضل الخلق، سید عالم صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کے حواری یعنی ساتھیوں نے عشق و محبت کا جو عالم گیر پیغام اور ثبوت دیا ہے اس کی مثال دنیا کی کسی بھی تاریخ میں نہیں پائی جاتی۔
 
صحابہ کرام رضوان اللہ تعالیٰ علیہم اجمعین کی مقدس اور پاکیزہ جماعت نے اپنے آقا ومولیٰ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کے ساتھ ہمیشہ عشق صادق کا سلوک کرتے ہوئے اپنے قول وفعل سے یہی کہا اور کیا: کروں تیرے نام پہ جاں فدا، نہ بس ایک جاں، دو جہاں فدا دوجہاں سے بھی نہیں جی بھرا کروں کیا کروڑوں جہاں نہیں (از:- امام عشق ومحبت حضرت رضاؔ بریلوی) محبوب رب العالمین صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کے عشق و محبت میں سرشار ہوکر انھوں نے دنیا کی کسی بھی چیز کی پرواہ نہیں کی۔
 
بڑی سے بڑی طاقت کو خاطر میں نہیں لائے۔ تحفظ ناموس رسالت کی خاطر اپنا سب کچھ نچھاور کردیا۔ اپنے آقا ومولیٰ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کی عظمت ومحبت کو سب سے مقدم جان کر اس محبت کے آداب کی بجا آوری میں ہنسی خوشی اپنی جان تک قربان کردی۔ اپنے آقا ومولیٰ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کے نام پر مرمٹنے میں ہی انھوں نے اپنی حیات جانی اور اس شوق میں اپنے سرکٹا کر حیات جاویدانی پائی۔ مرنے والے کو ےہاں ملتی ہے عمر جاوید زندہ چھوڑے گی کسی کو نہ مسیحائی دوست (از:- امام عشق ومحبت حضرت رضاؔ بریلوی) جنگ
:بدر کے موقع پر حضور اقدس رحمت عالم صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نے صحابہ کرام کے ساتھ مشورہ فرمایا اور لشکر کفار کے مقابلے میں جنگ وقتال کے متعلق ان کی رائے طلب فرمائی تو صحابہ کرام نے اپنے آقا ومولیٰ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں یوں عرض کیا 
 
''حضرت سعد بن عبادہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے عرض کیا کہ ''یارسول اللہ! خدا کی قسم! آپ ہمیں عدن تک لے جائیں گے تو ہم انصار میں سے کوئی ایک شخص بھی آپ کے حکم کی خلاف ورزی نہیں کرے گا۔'' ''حضرت مقداد بن عمرو نے یوں عرض کیا کہ ''یا رسول اللہ ! ہم آپ کے ساتھ ہیں۔ آپ جہاں چاہیں ہمیں لے جائیں۔ ہم کبھی بھی وہ بات اپنے منھ سے نہ نکالیں گے، جو بنی اسرائیل نے حضرت موسیٰ علیہ السلام سے کہی تھی کہ '' فَاذْھَبْ اَنْتَ وَرَبُّکَ فَقَاتِلَا اِنَّا ھھُنَا قٰعِدُوْنَ ''(یعنی آپ جائیے اور آپ کا رب، تم دونوں لڑو، ہم یہاں بیٹھے ہیں) قسم ہے اس ذات کی جس نے آپ کو حق کے ساتھ بھیجا۔ہم آپ کے ساتھ جائیں گے اور جہاں آپ جائیں گے آپ کے ساتھ مل کر مردانہ وار لڑیں گے۔
 

 

 Q: Is is permissible to serve as a soldier or doctor or cook or mechanic in the army of a nation that is fighting or helping other nations to fight the Muslims or will do so in the future?

A: All praise belongs to Allah, Lord of the worlds. It's unacceptable for a Muslim personnel to partake in any manner the fighting in the battles against their brothers in faith. Your loyalty should be unconditional only to Allah and His Messenger (SAW) and not to any socialist, communist or democratic state. This is in accordance with the Islamic jurisprudence rules, and no necessities can ever dictate such exceptions. Do not tolerate this harm else you will invite a much greater harm from Allah. It is only because of these hypocrite Muslims who are over-conductive to the kuffar administration that these Mushriks are able to oppress and mislead the Ummah. Hope this answers the question. In short the gardener of devil is devil himself. And peace be upon those who practice the Guidance of Islam.



 

 قـــــــــــــل إن صلاتــــــــــي

ونســــــــــــــــكــــــــــــــــي

ومحيـــــــــــــــــــــــــــــــــاي

وممـــــــــــــــــــــــــــــــــاتي

للــــــــه رب العـــــالميــــــن

 


 

Birthday, Valentine's day, Children's day, Chocolate's day, Rose's day...
Most of the people remember and some even celebrate them...
But...
What about the 'Judgement Day'...
Do you Remember it? Do you Care for it? Do you Work for it?
 

 

ونحــــــــــن أقــــــــــرب إليــــــــــه مــــــــــن حبــــــــــل الـوريــــــــــد
 

The Martyr has seven blessings from Almighty Allah

بسم الله الرحمن الرحيم

_____________________________________________

It was reported in the hadeeth of al-Miqdaam ibn Ma’di Qarb that the Holy Prophet (Peace and Blessings of Allah be upon Him) said:

The Martyr (Shaheed) is granted seven special favours from Allah:

1. He is forgiven (his sins) at the first drop of his blood.

2. He sees his place in the Paradise.

3. He is saved from the punishment of the grave.

4. He will be secure on the Day of the Greatest Terror (the Day of Judgement).

5. He is married to 72 Hoor al-`Ain (beautiful women of Paradise).

6. A crown of dignity will be placed on his head, one ruby of which is better than the whole world and and all that is in it.

7. He will be permitted to intercede for seventy of his relatives.

_____________________________________________

سبحان الله

Narrated by: 1. Al-Tirmidhi 2. Ibn Maajah in al-Sunan 3. Ahmad 4. ‘Abd al-Razzaaq in al-Musannaf 5. Al-Tabaraani in al-Kabeer 6. Sa’eed ibn Mansoor in al-Sunan 7. Ibn Hibbaan

 


 

❝According to the sixth edition of the Columbia Encyclopedia, Muhammad is the most common given name in the world. Also this is the most frequently mentioned name worldwide and round the clock as it is invoked twice in every Azaan and Takbir and by default five times in every Salah unit prayed five times a day.❞

Say Subhan'Allah :)


 

 
Indeed, those who pledge allegiance to You, [O Muhammad (SAW)] - they are actually pledging allegiance to Allah. The hand of Allah is over their hands. So he who breaks his word only breaks it to the detriment of himself. And he who fulfills that which he has promised Allah - He will give him a great reward.
--------------------------
[Al-Fatĥ (The Victory), 48:10]
 

 
We have sent You [O Muhammad (SAW)] as witness (of the truth) and harbinger of good news and a warner. So that (men) may believe in God and His Apostle, and honour Him and revere Him, and sing His praises morning and evening.
--------------------------
[Al-Fatĥ (The Victory), 48:8-9]
 

 

Milad un-Nabi (SAW) Mubarak
اللھم صل علی سیدنا ومولانا محمد وعلی آلہ وصحبہ وبارک وسلم
_________________________________
 
O men, a warning has come to you from your Lord, a remedy for the (doubts) of the heart, and a guidance and grace for those who believe. Say: "It is the blessing and mercy of God; so rejoice in it. It is better than all that you amass." [Yūnus (Jonah), 10:57-58] So celebrate and rejoice to show gratitude to Almighty Allah on His Greatest Mercy and Blessing, that is, Milad-un-Nabi (SAW) because Qur’an Says: وَمَا أَرْسَلْنَاكَ إِلا رَحْمَةً لِّلْعَالَمِينَ And We did not send You [O Muhammad (SAW)] except as a Mercy for all the worlds.
[Al Anbyā (Prophets), 21:107]
_________________________________
 
الحمد لله الذي خلق كل شيءٍ وقدّره
 

 

An Islamic scholar says he saw the Holy Prophet (SAW) in his dream and asked, ‘Ya Rasool-Allah (SAW) do you like Muslims' celebrating Your birth every year?’
The Holy Prophet (SAW) replied,
‘I get pleased with the one who gets pleased with Me.’
---------------
(Tazkira-tul-wa’izeen p600, Subh-e-Baharaan p8)

طلع البدر علينا
----------------
طلع البدر علينا
Oh the white moon rose over us
من ثنيات الوداع
From the valley of al-Wadā
وجب الشكر علينا
And we owe it to show gratefulness
ما دعى لله داع
Where the call is to Allah
أيها المبعوث فينا
Oh you who were raised among us
جئت بالأمر المطاع
Coming with a word to be obeyed
جئت شرفت المدينة
You have brought to this city nobleness
مرحبا يا خير داع
Welcome best caller to God's way
----------------
Fourteen hundred years old Nasheed that the Ansar sung to the Prophet Muhammad (SAW) upon arrival at Yathrib
 

 

The Emaan of Abu ‘Ubaidah Ibn Al-Jarrah (رضي الله عنه)
______________________________________________
 
...One man in particular, however, kept on pursuing Abu Ubaidah (RA) wherever he turned and Abu Ubaidah (RA) tried his best to keep out of his way and avoid an encounter with him. Abu Ubaidah (RA) tried desperately to avoid him. Eventually the man succeeded in blocking Abu Ubaidah (RA)’s path and stood as a barrier between him and the Quraysh in the battle of Badr. They were now face to face with each other. Abu Ubaidah (RA) could not contain himself any longer. He (RA) struck one blow to the man’s head. The man fell to the ground and died instantly. The following verse of the Qur'an was written about this display of character by Abu ‘Ubaidah (RA):
---------------------
“You will not find a people believing in Allah and the Last Day making friends with those who oppose Allah and His Messenger (SAW) even if these were their fathers, their sons, their brothers or their clan. Allah has placed faith in their hearts and strengthened them with a spirit from Him. He will cause them to enter gardens beneath which streams flow that they may dwell therein. Allah is well pleased with them and they well pleased with Him. They are the party of Allah. Is not the party of Allah the successful ones? (58:22).”
---------------------
The man in fact was Abdullah ibn-e Jarrah, the father of Abu Ubaidah (RA)! Abu Ubaidah (RA) obviously did not want to kill his father but in the actual battle between faith in Allah and polytheism, the choice open to him was profoundly disturbing but clear. He killed the polytheism in the person of his father.
 

 .. أدعية الأنبياء عليهم السلام ..

--------------------------------------------------------------------

سيدنا آدم عليه السلام

"ربنا إنا ظلمنا أنفسنا ... وإن لم تغفر لنا وترحمنا لنكونن من الخاسرين"


سيدنا نوح عليه السلام

"رب اغفر لي ولوالدي ولمن دخل بيتي مؤمناً وللمؤمنين والمؤمنات ولاتزد الظالمين إلا تبارا"


سيدنا هود عليه السلام


"اني توكلت على الله ربي وربكم ما من دابة إلا هو آخذ بناصيتها إن ربي على صراط مستقيم"


سيدنا أبراهيم عليه السلام

"رب اجعلني مقيم الصلاة ومن ذريتي ربنا وتقبل دعاء "

"ربنا تقبل منا إنك أنت السميع العليم وتب علينا إنك أنت التواب الرحيم"


سيدنا يوسف عليه السلام

"فاطر السموات والأرض أنت وليي في الدنيا والآخرة توفني مسلما وألحقني بالصالحين"


سيدنا شعيب عليه السلام

"وسع ربنا كل شيء علما على الله توكلنا ربنا افتح بيننا وبين قومنا بالحق وأنت خير الفاتحين"


سيدنا موسى عليه السلام

"رب بما أنعمت علي فلن أكون ظهيرا للمجرمين رب اشرح لي صدري ويسر لي أمري واحلل عقدة من لساني يفقهوا قولي"


سيدنا سليمان عليه السلام

"رب أوزعني أن أشكر نعمتك التي أنعمت علي وعلى والدي وأن أعمل صالحا ترضاه وأدخلني برحمتك في عبادك الصالحين"


سيدنا أيـــوب عليه السلام

"رب إنى مسني الضر وأنت أرحم الراحمين"


سيدنا يونـس عليه السلام

"لا إله إلا أنت سبحانك إني كنت من الظالمين"


سيدنا يعقوب عليه السلام

"انما اشكو بثي وحزني الى الله"


سيدنا محمـد صلى الله عليه وسلم

"اللهم آتنا في الدنيا حسنة وفي الآخرة حسنه وقنا عذاب النار"


(منقول)

--------------------------------------------------------------------

اللـــــــــــــهم امــــــــــــين يـــــــــــارب العالــــــــــــــمين



 

 

Medicine of Qur'ân

_________________________________________________

One of the Swiss pharmaceutical companies has started producing a new medicine called “Medicine of Qur'ân” which allows the treatment of cataract without surgery. As the newspaper Ar-Raya, published in Qatar writes, “this drug which was synthesised by an Egyptian doctor Abdul Basit Muhammad from the secretions of human sweat glands and has an effectiveness of 99 per cent with absolutely no side effects, was registered in Europe and the United States. It is also reported that one of the Swiss companies produces the new drug in the form of liquid and eye drops. The source of inspiration is Surah Yusuf. Dr Abdul Basit Muhammad emphasised that he obtained his inspiration from Surah Yusuf and said: “ Once in the morning, I was reading Surah Yusuf. My attention lingered over the 84th and successive ayats (verses). They tell that Prophet Yakub who was mourning his son Yusuf (peace be upon them) in sadness and grief got his eyes turned white and later when people cast over the sorrowful father’s face, the shirt of his son Yusuf, vision returned to him and he was able to see again. Here I started pondering. What could be there in the shirt of Yusuf? Finally I arrived at the decision that nothing except sweat could be on it. I concentrated my thoughts over the sweat and its composition. Then I proceeded to the laboratory for research. I carried out a series of experiments on rabbits. The results turned out to be positive. Later I performed treatment on 250 patients by administering the drug twice a day for two weeks. Finally I achieved 99 per cent success and said to myself: “ This is the miracle of the Qur'ân” Dr Abdul Basit Muhammad presented the results of his research to appropriate institutions in Europe and the United States dealing with patenting of new discoveries for consideration. After tests and research were performed, he finalised a contract with a Swiss company on the production of the medicine on the condition that the package should clearly mention-“Medicine of Qur'ân.” In the words of the Egyptian scientist, the company accepted his condition and started producing the new drug. _________________________________________________

(Courtesy-Ar-Raya, Qatar)


 

 

NASA conceals the truth about "Laylat Al-Qadr" fearing to spread Islam

_________________________________________________

Dr. Abdul Basit Muhammad, President of the scientific complex in the Holy Quran in Egypt, said that the National Aeronautics and Space Administration (NASA) conceals a scientific fact of Laylat Al-Qadr. This is the night that the first verse of the Qur'an was revealed to the Holy Prophet (SAW). He pointed out the failure of wealthy Arabs to take the necessary steps to publish this case around the world. According to Basit Muhammad, during Laylat Al-Qadr, the temperature is moderate; direct sun beam doesn’t hit the earth directly. He also explains the scientific fact that thousands of meteors hit earth every day, except in Laylat Al-Qadr which witnesses no beams or any colllisions with meteors as well as amongst other heavenly bodies. This was discovered by NASA 10 years ago, but they refused to spread it in order to prevent non-Muslims to convert to Islam, quoted by the words of a NASA scientist, Karnar, and reported by the Egyptian "Delegation" newspaper. _________________________________________________

Know More... http://shabab.ahram.org.eg/UI/Front/Inner.aspx?NewsContentID=4749


 

The Healing Sound

____________________________________

Recitation of the Qur’anic verses can have healing effects that are mediated through both the tongue movements and sound waves.Healing can be mediated through recital of some specific verses and words that involve touching of the tip of the tongue on the ‘magic spot’ located in the hard palate on the back of the gums of upper incisors (front teeth). Touch of tongue stimulates the mechanoreceptors located underneath the mucosal lining covering the hard palate, which in turn activates more obscure processes in the brain leading to health positive effects. The sacred words specially related with the ‘magic spot’ include ‘Allah’, ‘La ilaha illallah’ the first four ‘kalima’s and specially the verse about whom the Prophet (SAWW) has said that it gives cure from 99 diseases: “Lahaula wala quwata illa Billah L-Aliyyil-Adhim“. Effects of sound waves generated during Qur’anic recitation are mediated by two mechanisms. Firstly, through the ears sound waves are converted into electrical stimuli that activate the Auditory area of the brain that in turn stimulates release of chemicals and messengers that have healing properties. Secondly, the sound waves especially at frequencies ranging from 50 – 800 db pass through the body and in the process they are transduced by the body tissues and cells leading to a positive change in the vibratory frequency of the cells and generation of electrical stimuli. Discussion in the following pages makes it clear that stimuli are generated as a consequence of movements of tongue and the effects of sound waves on the body and the brain, but it is still not clear how these stimuli promote health. More work is needed. However on face value we can correctly assume that they must have healing effects as Allah has disclosed in very plain terms in the Holy Qur’an: “And We sent down in the Qur’an that which is Healing and a Mercy to those who Believe” (Qur’an 17:82)

____________________________________

Know more... http://www.slideshare.net/kingabid/the-healing-sound


 

"The way to paradise is an uphill climb whereas hell is downhill. Hence, there is a struggle to get to paradise and not to hell." -Imam Al Ghazali
 

 

کرم نے تیرے بخشا حوصلہ عرضِ تمنا کا
 
 ؐۖوگرنہ میں کہاں‌ کا ہوں مسلمان یا رسول اللہ
 

 

کیا عید میلاد النبی صلی اللہ علیہ وسلم منانا بدعت ہے عید میلاد النبی صلی اللہ علیہ وسلم کی شرعی حیثیت کیا ہے


http://www.slideshare.net/kingabid/milad-unnabi-saw


عید میلاد النبی صلی اللہ علیہ وسلم کی شرعی حیثیت کیا ہے
 
___________________________________________________
 
ماہ ربیع الاول میں بالعموم اور بارہ بارہ ربیع الاول کو بالخصوص آقائے دو جہاں صلی اللہ علیہ وسلم کی ولادت باسعادت کی خوشی میں پورے عالم اسلام میں محافل میلاد منعقد کی جاتی ہیں۔ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا میلاد منانا جائز و مستحب ہے اور اس کی اصل قرآن و سنت سے ثابت ہے۔ ارشاد باری تعالٰی ہوا ، ( اور انہیں اللہ کے دن یاد دلاؤ ) ۔ ( ابراہیم ، ۵ ) امام المفسرین سیدنا عبد اللہ بن عباس ( رضی اللہ عنہما ) کے نزدیک ایام اللہ سے مراد وہ دن ہیں۔جن میں رب تعالٰی کی کسی نعمت کا نزول ہوا ہو ۔ ( ان ایام میں سب سے بڑی نعمت کے دن سید عالم صلی اللہ علیہ وسلم کی ولادت و معراج کے دن ہیں ، ان کی یا د قائم کرنا بھی اس آیت کے حکم میں داخل ہے)۔ (تفسیر خزائن العرفان) بلاشبہ اللہ تعالٰی کی سب سے عظیم نعمت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات مقدسہ ہے ۔ ارشاد باری تعالٰی ہوا ، ( بیشک اللہ کا بڑا احسان ہوا مسلمانوں پر کہ ان میں انہیں میں سے ایک رسول بھیجا)۔ (آل عمران ،۱۶۴) آقا و مولی صلی اللہ علیہ وسلم تو وہ عظیم نعمت ہیں کہ جن کے ملنے پر رب تعالٰی نے خوشیاں منانے کا حکم بھی دیا ہے
 
۔ ارشاد ہوا ، ( اے حبیب ! ) تم فرماؤ ( یہ ) اللہ ہی کے فضل اور اسی کی رحمت ( سے ہے ) اور اسی چاہیے کہ خوشی کریں ، وہ ( خو شی منانا ) ان کے سب دھن و دولت سے بہتر ہے ) ۔ ( یونس ، ۵۸ ) ایک اور مقام پر نعمت کا چرچا کرنے کا حکم بھی ارشاد فرما یا، (اور اپنے رب کی نعمت کا خوب چرچا کرو)۔ (الضحی ۱۱، کنز الایمان) خلاصہ یہ ہے کہ عید میلاد منانا لوگوں کو اللہ تعالٰی کے دن یا د دلانا بھی ہے، اس کی نعمت عظمی کا چرچا کرنا بھی اور اس نعمت کے ملنے کی خوشی منانا بھی۔ اگر ایمان کی نظر سے قرآن و حدیث کا مطالعہ کیا جائے تو معلوم ہوگا کہ ذکر میلاد مصطفے صلی اللہ علیہ وسلم اللہ تعالٰی کی سنت بھی ہے ۔ اور رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت بھی۔ سورہ آل عمران کی آیت ( ۸۱ ) ملاحظہ کیجیے ۔ رب ذوالجلا ل نے کم و بیش ایک لاکھ چوبیس ہزار انبیاء کرام کی محفل میں اپنے حبیب لبیب صلی اللہ علیہ وسلم کی آمد اور فضائل کا ذکر فرمایا ۔ گویا یہ سب سے پہلی محفل میلاد تھی جسے اللہ تعالٰی نے منعقد فرمایا ۔ اور اس محفل کے شرکاء صرف انبیاء کرام علیہم السلام تھے ۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی دنیا میں تشریف آوری اور فضائل کا ذکر قرآن کریم کی متعدد آیات کریمہ میں موجود ہے۔ رسول معظم صلی اللہ علیہ وسلم کے مبارک زمانہ کی چند محافل کا ذکر ملاحظہ فرمائیے۔ آقا و مولی صلی اللہ علیہ وسلم نے خود مسجد نبوی میں منبر شریف پر اپنا ذکر ولادت فرمایا۔ (جامع ترمذی ج ۲ ص ۲۰۱) آپ نے حضرت حسان رضی اللہ عنہ کے لیے منبر پر چادر بچھائی اور انہوں نے منبر پر بیٹھ کر نعت شریف پڑھی، پھر آپ نے ان کے لیے دعا فرمائی۔ (صحیح بخاری ج ۱ ص ۶۵) حضرت عباس رضی اللہ عنہ نے غزوہ تبوک سے واپسی پر بارگاہ رسالت میں ذکر میلاد پر مبنی اشعار پیش کیے (اسد الغابہ ج ۲ ص ۱۲۹)
 
اسی طرح حضرات کعب بن زبیر ، سواد بن قارب ، عبد اللہ بن رواحہ ، کعب بن مالک و دیگر صحابہ کرام ( رضی اللہ عنہم ) کی نعتیں کتب احادیث و سیرت میں دیکھی جاسکتی ہیں ۔ بعض لوگ یہ وسوسہ اندازی کرتے ہیں کہ اسلام میں صرف دو عید یں ہیں لہذا تیسری عید حرام ہے ۔ ( معاذ ا للہ ) اس نظریہ کے باطل ہونے کے متعلق قرآن کریم سے دلیل لیجئے ۔ ارشاد باری تعالٰی ہے ، ( عیسیٰ بن مریم نے عرض کی ، اے اللہ ! اے ہمارے رب ! ہم پر آسمان سے ایک ( کھانے کا ) خوان اتار کہ وہ ہمارے لیے عید ہو ہمارے اگلوں پچھلوں کی)۔ (المائدہ ، ۱۱۴، کنزالایمان) صدر الافاضل فرماتے ہیں ، ( یعنی ہم اس کے نزول کے دن کو عید بنائیں ، اسکی تعظیم کریں ، خوشیاں منائیں ، تیری عبادت کریں ، شکر بجا لا ئیں ۔ اس سے معلوم ہو ا کہ جس روز اللہ تعالٰی کی خاص رحمت نازل ہو ۔ اس دن کو عید بنانا اور خوشیاں بنانا ، عبادتیں کرنا اور شکر بجا لانا صالحین کا طریقہ ہے ۔ اور کچھ شک نہیں کہ سید عالم صلی اللہ علیہ وسلم کی تشریف آوری اللہ تعالٰی کی عظیم ترین نعمت اور بزرگ ترین رحمت ہے اس لیے حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی ولادت مبارکہ کے دن عید منانا اور میلاد شریف پڑھ کر شکر الہی بجا لانا اور اظہار فرح اور سرور کرنا مستحسن و محمود اور اللہ کے مقبول بندوں کا طریقہ ہے ) ۔ ( تفسیر خزائن العرفان )۔ حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہما نے آیت (الیوم اکملت لکم دینکم ) تلاوت فرمائی تو ایک یہود ی نے کہا، اگر یہ آیت ہم پر نازل ہوتی تو ہم اس دن کو عید مناتے۔ اس پر آپ نے فرمایا ، یہ آیت جس دن نازل ہوئی اس دن دو عیدیں تھیں، عید جمعہ اور عید عرفہ۔ (ترمذی) پس قرآن و حدیث سے ثابت ہوگیا کہ جس دن کوئی خاص نعمت نازل ہو اس دن عید منانا جائز بلکہ اللہ تعالٰی کے مقرب نبی حضرت عیسیٰ علیہ السلام اور صحابہ کرام علیہم الرضوان کی سنت ہے۔ چونکہ عید الفطر اور عید الاضحی حضور ﷺ ہی کے صدقے میں ملی ہیں اس لیے آپ کا یوم میلاد بدرجہ اولی عید قرار پایا۔ عید میلاد پہ ہوں قربان ہماری عیدیں کہ اسی عید کا صدقہ ہیں یہ ساری عیدیں شیخ عبد الحق محدث دہلوی قدس سرہ اکابر محدثین کے حوالے سے فرماتے ہیں کہ شب میلاد مصفطے صلی اللہ علیہ وسلم شب قدر سے افضل ہے، کیونکہ شب قدر میں قرآن نازل ہو اس لیے وہ ہزار مہنوں سے بہتر قرار پائی تو جس شب میں صاحب قرآن آیا وہ کیونکہ شب قدر سے افضل نہ ہو گی؟ (ماثبت بالستہ)
 
جس سہانی گھڑی چمکا طیبہ کا چاند اس دل افروز ساعت پہ لاکھوں سلام صحیح بخاری جلد دوم میں ہے کہ ابو لہب کے مرنے کے بعد حضرت عباس رضی اللہ عنہ نے اسے خ-واب میں بہت بری حالت میں دیکھا اور پوچھا ، مرنے کے بعد تیرا کیا حال رہا؟ ابو لہب نے کہا، تم سے جدا ہو کر میں نے کوئی راحت نہیں پائی سوائے اس کے کہ میں تھوڑا سا سیراب کیا جاتا ہوں کیونکہ میں نے محمد (صلی اللہ علیہ وسلم ) کی پیدائش کی خوشی میں اپنی لونڈی ثویبہ کو آزاد کیا تھا۔ امام ابن جزری فرماتے ہیں کہ جب حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے میلاد کی خوشی کی وجہ سے ابو لہب جیسے کافر کا یہ حا ل ہے کہ اس کے عذاب میں کمی کردی جاتی ہے ۔ حالانکہ ا س کی مذمت میں قرآن نازل ہوا تو حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے مومن امتی کا کیا حال ہوگا ۔ جو میلاد کی خوشی میں حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی محبت کے سبب مال خرچ کرتا ہے ۔ قسم ہے میری عمر کی ، اس کی جزا یہی ہے کہ اللہ تعالٰی اسے اپنے افضل و کرم سے جنت نعیم میں داخ-ل فرمادے ۔ ( مواہب الدنیہ ج ۱ ص ۲۷ ، مطبوعہ مصر ) اب ہم یہ جائزہ لیتے ہیں کہ خالق کائنات نے اپنے محبوب رسول صلی اللہ علیہ وسلم کا جشن عید میلاد کیسے منایا؟ سیرت حلبیہ ج ۱ص ۷۸ اور خصائص کبری ج۱ ص ۴۷ پر یہ روایت موجود ہے کہ (جس سال نور مصطفے صلی اللہ علیہ وسلم حضرت آمنہ رضی اللہ عنہا کو ودیعت ہوا وہ سال فتح و نصرت ، تر و تازگی اور خوشحالی کا سال کہلایا۔ اہل قریش اس سے قبل معاشی بد حالی اور قحط سالی میں مبتلا تھے ۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی ولادت کی برکت سے اس سال رب کریم نے ویران زمین کو شادابی اور ہریالی عطا فرمائی، سوکھے درخت پھلوں سے لدگئے اور اہل قریش خوشحال ہوگئے ) ۔ اہلسنت اسی مناسبت سے میلاد مصطفے صلی اللہ علیہ وسلم کی خوسی میں اپنی استطاعت کے مطابق کھانے، شیرینی اور پھل وغیرہ تقسیم کرتے ہیں ۔ عید میلاد النبی صلی اللہ علیہ وسلم کے موقع پر شمع رسالت کے پروانے چراغاں بھی کرتے ہیں ۔ اس کی اصل مندرجہ ذیل احادیث مبارکہ ہیں۔ آقا و مولی صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد گرامی ہے ، (میری والدہ ماجدہ نے میری پیدائش کے وقت دیکھا کہ ان سے ایسا نور نکلا جس سے شام کے محلات روشن ہوگئے۔ (مشکوہ)
 
حضرت آمنہ ( رضی اللہ عنہا ) فرماتی ہیں ، ( جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی ولادت ہوئی تو ساتھ ہی ایسا نور نکلا جس سے مشرق سے مغرب تک ساری کائنات روشن ہوگئی ) ۔ (طبقاب ابن سعد ج ۱ ص ۱۰۲، سیرت جلسہ ج ۱ ص ۹۱) ہم تو عید میلاد صلی اللہ علیہ وسلم کی خوشی میں اپنے گھروں ا ور مساجد پر چراغاں کرتے ہیں ، خالق کائنات نے نہ صرف سا ر ی کائنات میں چراغاں کیا بلکہ آسمان کے ستاروں کو فانوس اور قمقمے بنا کر زمین کے قریب کردیا ۔ حضرت عثمان بن ابی العاص ( رضی اللہ عنہ ) کی والدہ فرماتی ہیں ، ( جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی ولادت ہوئی میں خانہ کعبہ کے پاس تھی ، میں نے دیکھا کہ خانہ کعبہ نور سے روشن ہوگیا ۔ اور ستارے زمین کے اتنے قریب آگئے کہ مجھے یہ گمان ہوا کہ کہیں وہ مجھ پر گر نہ پڑیں ) ۔ ( سیرت حلبیہ ج ۱ ص ۹۴ ، خصائص کبری ج۱ ص ۴۰ ، زرقانی علی المواہب ۱ ص ۱۱۶) سیدتنا آمنہ ( رضی اللہ عنہا ) فرماتی ہیں ، ( میں نے تین جھندے بھی دیکھے ، ایک مشرق میں گاڑا گیا تھا ۔ دوسرا مغرب میں اور تیسرا جھنڈا خا نہ کعبہ کی چھت پر لہرارہا تھا ) ۔ ( سیرت حلبیہ ج ۱ ص ۱۰۹ ) یہ حدیث ( الو فابا حوال مصطفے صلی اللہ علیہ وسلم ) مےں محدث ابن جوزی نے بھی روایت کی ہے ۔ اس سے میلاد النبی صلی اللہ علیہ وسلم کے موقع پر جھنڈے لگانے کی اصل بھی ثابت ہوئی۔ عید میلاد النبی صلی اللہ علیہ وسلم کے موقع پر جلوس بھی نکالا جاتا ہے اور نعرئہ رسالت بلند کیے جاتے ہیں۔ اس کی اصل یہ حدیث پاک ہے کہ جب آقا و مولی صلی اللہ علیہ وسلم ہجرت کر کے مدینہ طیبہ تشریف لائے تو اہلیان مدینہ نے جلوس کی صورت میں استقبال کیا۔ حدیث شریف میں ہے کہ مرد اور عورتیں گھروں کی چھتوں پر چرھ گئے اور بچے اور خدام گلیوں میں پھیل گئے، یہ سب با آواز بلند کہہ رہے تھے، یا محمد یا رسول اللہ ، یا محمد یا رسول اللہ ۔ (صلی اللہ علیہ وسلم) ۔(صحیح مسلم جلد دوم باب الھجرہ) جشن عید میلا د النبی صلی اللہ علیہ وسلم کی شرعی حیثیت بیان کرنے کے بعد اب چند تاریخی حوالہ جات پیش خدمت ہیں ۔ جن سے ثا بت ہو جائے گا کہ محافل میلاد کا سلسلہ عالم اسلام میں ہمیشہ سے جاری ہے ۔ محدث ابن جوزی رحمہ اللہ (متوفی ۵۹۷ ھ) فرماتے ہیں، (مکہ مکرمہ ، مدینہ طیبہ ، یمن ، مصر، شام اور تمام عالم اسلام کے لوگ مشرق سے مغرب تک ہمیشہ سے حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی ولادت باسعادت کے موقع پر محافل میلاد کا انعقاد کرتے چلے آرہے ہیں۔ ان میں سب سے زیادہ اہتمام آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی ولادت کے تذکرے کا کیا جاتا ہے اور مسلمان ان محافل کے ذریعے اجر عظیم اور بڑی روحانی کامیابی پاتے ہیں)۔ (المیلاد النبوی ص ۵۸)
 
امام ابن حجر شافعی ( رحمہ اللہ ) ۔ ( م ۸۵۲ ھ ) فرماتے ہیں ، ( محافل میلاد و اذکار اکثر خیر ہی پر مشتمل ہوتی ہیں کیونکہ ان میں صدقات ذکر الہی اور بارگاہ نبوی صلی اللہ علیہ وسلم میں درود و سلام پیش کیا جاتا ہے)۔ (فتاوی حدیثیہ ص ۱۲۹) امام جلال الدین سیوطی ( رحمہ اللہ ) ۔ ( م ۹۱۱ ھ ) فرماتے ہیں ، ( میرے نزدیک میلاد کے لیے اجتماع تلاوت قرآن ، حیات طیبہ کے واقعات اور میلاد کے وقت ظاہر ہونے والی علامات کا تذکرہ ان بدعات حسنہ میں سے ہے ۔ جن پر ثواب ملتا ہے ۔ کیونکہ اس میں حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی تعظیم اور آپ کی ولادت پر خوشی کا ا ظہا ر ہوتا ہے ) ۔ ( حسن المقصد فی عمل المولدنی الہاوی للفتاوی ج ۱ ص ۱۸۹) امام قسطلانی شارح بخاری رحمہ اللہ (م ۹۲۳ھ) فرماتے ہیں، (ربیع الاول میں تمام اہل اسلام ہمیشہ سے میلاد کی خوشی میں محافل منعقد کرتے رہے ہیں۔ محفل میلادکی یہ برکت مجرب ہے کہ اس کی وجہ سے سارا سال امن سے گزرتا ہے ۔ اور ہر مراد جلد پوری ہوتی ہے۔ اللہ تعالٰی اس شخص پر رحمتیں نازل فرمائے جس نے ماہ میلاد کی ہر رات کو عید بنا کر ایسے شخص پر شدت کی جس کے دل میں مرض و عناد ہے)۔ (مواہب الدنیہ ج ۱ ص ۲۷) شاہ عبد الرحیم محدث دہلوی رحمہ اللہ ( والد شاہ ولی اللہ محدث دہلوی رحمہ اللہ ، م ۱۱۷۶ ھ ) فرماتے ہیں کہ میں ہر سال میلاد شریف کے دنوں میں کھانا پکوا کر لوگوں کو کھلایا کرتا تھا ۔ ایک سال قحط کی وجہ سے بھنے ہوئے چنوں کے سوا کچھ میسر نہ ہو ا ، میں نے وہی چنے تقسیم کرد یے ۔ رات کو خواب میں آقا و مولی صلی اللہ علیہ وسلم کی زیارت سے مشرف ہو اتو دیکھا کہ وہی بھنے ہوئے چنے سرکار دو عالم صلی اللہ علیہ وسلم کے سامنے رکھے ہوئے ہیں اور آپ بیحد خوش اور مسرور ہیں۔ (الدار الثمین ص ۸) ان دلائل و براہین سے ثابت ہوگیا کہ میلا د النبی صلی اللہ علیہ وسلم کی محافل منعقد کرنے اور میلاد کا جشن منانے کا سلسلہ امت مسلمہ میں صدیوں سے جاری ہے ۔ اور اسے بدعت و حرام کہنے والے دراصل خود بدعتی و گمراہ ہیں۔
 
___________________________________________________
  

 


Popular Books (PDF)

ISLAM -The Ultimate Covenant | الداعية الإسلامي / Caller To Islam | رب اغفر لي ولوالدي